spot_img

ذات صلة

جمع

ایران اپنے جوہری وعدوں پر عمل درآمد کرے: سعودی عرب

سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان نے اقوام متحدہ...

عمران خان کے بیانیہ کی بنیادی غلطی۔۔۔!

۔1تحریک ط۔ا۔ل۔ب۔ا۔ن اور ا۔ل۔ق۔ا۔ع۔د۔ہ نے پاکستانی ریاست کے خلاف...

‘نمبر دار کانیلا’ پھر کھل گیا۔۔۔!

ہندوستان کا بٹوارہ جدید عالمی تاریخ کے بڑے واقعات...

مفتاح اسماعیل کے نام۔۔۔!

مہنگائی کا طوفان ہے اور سب اس کی لپیٹ...

عمران مخالف بیانیہ بے اثر کیوں۔۔۔؟

میں سماجی نفسیات اور منطق واستدلال کے اصولوں سے...

بین الافغان مذاکرات: طالبان کا وفد ملا برادر کی قیادت میں پاکستان پہنچ گیا

قطر میں قائم افغان طالبان کے سیاسی دفتر سے آج ایک وفد بین الافغان مذاکرات کے لیے اسلام آباد پہنچا ہے۔ اس وفد کی قیادت افغان طالبان کے سیاسی امور کے ذمہ دار ملا عبدالغنی برادرکررہے ہیں۔ یاد رہے کہ یہ وفد پاکستان کی وزارت خارجہ کی دعوت پر یہاں پہنچا ہے۔

افغان امن عمل میں سہولت فراہم کرنے کی امریکی درخواست پر 2018 میں آزاد ہونے سے قبل ملا برادر نے پاکستانی سیکیورٹی اداروں کی تحویل میں تقریباً 8 سال گزارے ہیں۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ایک نیوز کانفرنس میں بتایا کہ یہ وفد (آج) منگل کو باضابطہ مذاکرات کے لیے دفتر خارجہ کا دورہ کرے گا۔

تاہم انہوں نے وفد کے یہاں قیام کے کے ایام اور دیگر مصروفیات کے بارے میں کوئی تفصیلات نہیں بتائیں۔

یہ طالبان کے سیاسی وفد کا پاکستان کا دوسرا دورہ ہے، اس سے قبل انہوں نے اکتوبر 2019 میں اسلام آباد کا دورہ کیا تھا۔

شاہ محمود قریشی نے یاد دلایا کہ آخری دورے نے فروری 2020 میں امریکی طالبان معاہدے پر حتمی دستخط کرنے میں کس طرح مدد فراہم کی تھی اور کہا کہ اس وفد کو دوبارہ اس امید کے ساتھ مدعو کیا گیا ہے کہ بین الافغان مذاکرات میں پائی جانے والی پیچیدگیوں کا ازالہ کیا جاسکے اور امکان ہے کہ یہ عمل جلد شروع ہوگا۔

چونکہ دونوں طرف سے قیدیوں کا تبادلہ بین الافغان مذاکرات کے آغاز کے لیے سب سے اہم شرط تھی جو دوحہ میں امریکی طالبان کے درمیان ہونے والے معاہدے پر دستخط کے تحت اصل میں 10 مارچ تک ہونی تھی تاہم قیدیوں کی رہائی میں تاخیر بات چیت کے آغاز کو روکنے کی سب سے اہم وجہ رہی۔

طالبان نے دعوی کیا ہے کہ انہوں نے اپنے وعدے کے مطابق تمام ایک ہزار افغان سیکیورٹی فورسز کو رہا کردیا ہے جبکہ کابل نے ان 5 ہزار افراد میں سے اب بھی 320 قیدیوں کو آزاد کرنا ہے۔

افغان حکومت نے ان 400 قیدیوں کی آخری رہائی کے لیے رضامندی حاصل کرلی ہے جس کے بارے میں ان کا کہنا ہے کہ یہ سنگین جرائم میں سزا یافتہ ہیں۔ اب تک ان میں سے صرف 80 کو رہا کیا گیا ہے جبکہ 320 سرکاری تحویل میں ہیں۔

رہائی میں تاخیر سے متعلق تازہ ترین افغان وضاحت یہ ہے کہ طالبان کے پاس بھی ابھی بھی 20 کمانڈوز موجود ہیں جن کی رہائی پر انہوں نے اتفاق کیا تھا۔

قیدیوں کی رہائی کے بارے میں طالبان اور افغان انتظامیہ کے مابین پائے جانے والے اختلافات بین الافغان بات چیت کے آغاز میں ایک بڑی رکاوٹ ہے۔

ایک ٹوئٹر پوسٹ میں طالبان کے سیاسی دفتر کے ترجمان سہیل شاہین نے اعلان کیا کہ پاکستان آنے والا وفد ‘افغانستان کے امن عمل میں حالیہ پیشرفت، دونوں ہمسایہ ممالک کے درمیان لوگوں کی نقل و حرکت اور تجارت میں آسانی، پاکستان میں افغان مہاجرین سے متعلق امور اور دیگر متعلقہ امور پر بات چیت کرے گا۔

سہیل شاہین نے مزید کہا کہ ‘مثبت تعلقات کو آگے بڑھانے’ اور ‘امن عمل کے بارے میں دنیا کو اپنے خیالات اور موقف کو پہنچانے’ کے لیے طالبان کے سیاسی دفتر کے وفود مختلف ممالک کے دورے کرتے رہتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ سفر کورونا وائرس کے پھیلنے کی وجہ سے ملتوی کردیے گئے تھے لیکن صورتحال بہتر ہونے کے بعد ان کا دوبارہ آغاز کیا جارہا ہے۔

انہوں نے عندیہ ظاہر کیا کہ طالبان وفود عنقریب چند دیگر ممالک کا بھی دورہ کریں گے۔

spot_imgspot_img