spot_img

ذات صلة

جمع

ایران اپنے جوہری وعدوں پر عمل درآمد کرے: سعودی عرب

سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان نے اقوام متحدہ...

عمران خان کے بیانیہ کی بنیادی غلطی۔۔۔!

۔1تحریک ط۔ا۔ل۔ب۔ا۔ن اور ا۔ل۔ق۔ا۔ع۔د۔ہ نے پاکستانی ریاست کے خلاف...

‘نمبر دار کانیلا’ پھر کھل گیا۔۔۔!

ہندوستان کا بٹوارہ جدید عالمی تاریخ کے بڑے واقعات...

مفتاح اسماعیل کے نام۔۔۔!

مہنگائی کا طوفان ہے اور سب اس کی لپیٹ...

عمران مخالف بیانیہ بے اثر کیوں۔۔۔؟

میں سماجی نفسیات اور منطق واستدلال کے اصولوں سے...

پاکستانیوں کی اکثریت ملک کو غلط راستے پر چلتا دیکھتی ہے ، سروے رپورٹ

ایک سروے کے مطابق زیادہ تر پاکستانیوں کو اس بات کا خدشہ ہے کہ پاکستان کسی غلط سمت میں مسلسل آگے بڑھ رہا ہے۔

فرانس سے تعلق رکھنے والی سیک سروے تنظیم آئیپسوس نے پاکستان میں صارفین کے اعتماد کو اپنے سروے کا عنوان بنایا، جس کے نتائج میں یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ ہر 5 میں 4 پاکستانیوں کو یہ خدشہ ہے کہ پاکستان گزشتہ دو برس سے غلط سمت کی طرف گامزن ہے۔

سروے میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ پاکستان میں آج جس طرح معاملات آگے بڑھ رہے ہیں، اس پر ہر 4 میں سے 3 پاکستانیوں نے عدم اطمینان کا اظہار کیا جبکہ تقریباً اتنے ہی پاکستانیوں نے ملک کی معاشی صورتحال کو خراب قرار دیاہے۔

رواں برس ستمبر میں کیے گئے اس سروے کو ملک کے شہری اور دیہی علاقوں کے 18 سال سے زائد عمر کے افراد سے اکھٹے کیے گئے ایک ہزار نمونوں پر ترتیب دیا گیا ہے جس میں نصف خواتین اور نصف مرد شامل تھے۔

سروے میں کہا گیا کہ بے روزگاری پریشان کن مسئلہ ہے جس میں مہنگائی اور غربت کے ساتھ ساتھ گزشتہ برس سے اضافہ ہوا ہے۔

سروے میں کہا گیا کہ مختف جوابوں کو اکٹھا کرنے پر 75 فیصد سخت سنگین مسائل عوام کی معاشی مایوس کن صورتحال سے تعلق رکھتے ہیں۔

سروے میں مزید کہا گیا کہ مہنگائی میں بڑا اضافہ اور غربت گزشتہ برس اگست سے بلندی پر ہے۔

رپورٹ کے مطابق تمام صوبوں میں رہائش کی مہنگی قیمتیں اس کے بعد بے روزگاری اور بڑھتی ہوئی غربت، بدعنوانی پنجاب اور خیبر پختونخوا میں 5 سب سے بڑی پریشانیاں میں شامل ہیں جبکہ سندھ میں لوڈ شیڈنگ سب سے نمایاں مسئلہ ہے۔

سروے میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ صرف 20 فیصد پاکستانی مقامی معاشی صورتحال کو مضبوط قرار دیتے ہیں۔

سروے میں کہا گیا کہ اب سے آئندہ 6 ماہ کی جانب دیکھتے ہوئے ہر 5 میں سے 4 پاکستانی معاشی صورتحال کو مزید بگڑتا ہوا دیکھ رہے ہیں۔

علاوہ ازیں ہر 5 میں سے 2 پاکستانی اپنی ذاتی اقتصادی صورتحال کو کمزور قرار دیتے ہیں جبکہ 50 فیصد پاکستانیوں کو خدشہ ہے کہ آئندہ 6 ماہ میں یہ مزید کمزور ہوگی۔

سروے میں یہ انکشاف ہوا ہےکہ ہر 5 میں 4 پاکستانی اگست 2018 سے اپنی جاب سیکیورٹی کے حوالے سے عدم اعتماد کا شکار ہیں۔

سروے کے مطابق گزشتہ برس ہر 2 میں سے ایک پاکستانی نے یا تو خود اپنی یا کسی جاننے والے کی نوکری ختم ہوتے دیکھا ہے،اگست 2018 سے اگست 2019 تک یہ شرح 31 فیصد تھی۔

سروے میں مزید کہا گیا کہ ہر 10 میں سے ایک پاکستانی کو خدشہ ہے کہ آئندہ 6 ماہ میں اس کی ملازمت ختم ہوسکتی ہے۔

سروے کے مطابق ایک سال قبل کے مقابلے 10 میں سے 9 پاکستانی گھریلو اشیا کی خریداری اور بڑی خریداری مثلاً کاریں، گھر وغیرہ خریدنے میں کم پر اعتماد محسوس کرتے ہیں۔

اس میں یہ دعویٰ کیا گیا کہ ایک سال قبل کے مقابلے 10 میں سے 8 پاکستانی بچت اور مستقبل میں سرمایہ کاری کی صلاحیت کے حوالےسے کم پر اعتماد ہیں۔

علاوہ ازیں سروے میں یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ صارفین کے اعتماد کی فہرست میں پاکستان ستمبر 2020 میں 28.9 فیصد پر کھڑا ہے جبکہ عالمی اوسط 41.8 فیصد ہے۔

spot_imgspot_img