spot_img

ذات صلة

جمع

ایران اپنے جوہری وعدوں پر عمل درآمد کرے: سعودی عرب

سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان نے اقوام متحدہ...

عمران خان کے بیانیہ کی بنیادی غلطی۔۔۔!

۔1تحریک ط۔ا۔ل۔ب۔ا۔ن اور ا۔ل۔ق۔ا۔ع۔د۔ہ نے پاکستانی ریاست کے خلاف...

‘نمبر دار کانیلا’ پھر کھل گیا۔۔۔!

ہندوستان کا بٹوارہ جدید عالمی تاریخ کے بڑے واقعات...

مفتاح اسماعیل کے نام۔۔۔!

مہنگائی کا طوفان ہے اور سب اس کی لپیٹ...

عمران مخالف بیانیہ بے اثر کیوں۔۔۔؟

میں سماجی نفسیات اور منطق واستدلال کے اصولوں سے...

جوبائیڈن کی کامیابی اور پاکستان

امریکی انتخابات میں  جوبائیڈن کی کامیابی  پاکستان اور کشمیرپر   مثبت اثرات مرتب کرسکتی ہے

جوبائیڈن امریکہ کے ایک تجربہ کار سیاست دان ہیں، جنہوں نے 1970 میں کونسلر کا الیکشن جیت کر اپنی سیاست کا آغاز کیا تھا۔ وہ پارلیمانی سیاست کا ایک وسیع تجربہ رکھتے ہیں اور 1973 سے امریکہ کے ایوان بالا کے رکن منتخب ہوتے آرہے ہیں۔

ڈیموکریٹک پارٹی سے تعلق رکھنے والے 77 سالہ جوبائیڈن  اوباما دور حکومت میں امریکہ کے نائب صدر کی حیثیت سے بھی فرائض انجام دے چکے ہیں اور حالیہ صدارتی انتخابات میں ڈیموکریٹس کے امید وار ہیں۔ ایک اچھے مننتظم اور غیر جانبدارانہ رائے رکھنے  کی شہرت کے حامل  جوبائیڈن  کے اپنے نائب صدارت کے دور میں بطور سینیٹر پاکستان کے ساتھ اچھے تعلقات رہے ہیں۔ 2008 میں پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں جوبائیڈن کو پاکستان کے دوسرے بڑے سویلین ایوارڈ ہلال پاکستان سے نوازا گیا تھا۔ یہ اعزاز سینیٹر جوبائیڈن اور رچرڈ لوگر کو  پاکستان کے لیے 105 بلین ڈلر کی امداد منظور کرانے کے لیے کی جانے والی کوششوں کے اعتراف میں دیا گیا تھا۔

جوبائیڈن  ہمیشہ سے مسئلہ کشمیر  پر پاکستانی موقف کے حامی رہے ہیں اور بھارت سے مظلوم کشمیریوں کو آزادی اظہار رائے اور خودمختاری دینے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں۔ انہوں نے گذشتہ برس کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرکے وفاق کے تحت دوصوبوں میں تقسیم کرنے کے عمل کی بھی مخالفت کی تھی اور کشمیر کی  پرانی حیثیت بحال کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

نومنتخب ڈیموکریٹ صدر جوبائیڈن انسانی حقوق کی سربلندی کے لیے کام کرنے کے حوالے سے بھی خاصی شہرت رکھتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ روہنگیا میں مسلمانوں کے قتل عام اور چین میں ایغور مسلم کمیونٹی پر ہونے والے ظلم وتشدد کے خلاف مضبوط آواز بلند کرتے رہے ہیں۔

اپنی انتخابی مہم کے دوران جوبائیڈن نے مسلمانوں کے ساتھ حسن سلوک اور تارکین وطن شہریوں کو بہتر سہولیات فراہم کرنے اور  ٹرمپ دور کی تارکین وطن مخالف پالیسیوں نظر ثانی کا بھی وعدہ کیا تھا۔

محمد یونس قاسمی
محمد یونس قاسمی
ایڈیٹر، ریسرچر و کالم نگار
spot_imgspot_img