spot_img

ذات صلة

جمع

ایران اپنے جوہری وعدوں پر عمل درآمد کرے: سعودی عرب

سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان نے اقوام متحدہ...

عمران خان کے بیانیہ کی بنیادی غلطی۔۔۔!

۔1تحریک ط۔ا۔ل۔ب۔ا۔ن اور ا۔ل۔ق۔ا۔ع۔د۔ہ نے پاکستانی ریاست کے خلاف...

‘نمبر دار کانیلا’ پھر کھل گیا۔۔۔!

ہندوستان کا بٹوارہ جدید عالمی تاریخ کے بڑے واقعات...

مفتاح اسماعیل کے نام۔۔۔!

مہنگائی کا طوفان ہے اور سب اس کی لپیٹ...

عمران مخالف بیانیہ بے اثر کیوں۔۔۔؟

میں سماجی نفسیات اور منطق واستدلال کے اصولوں سے...

2018 میں انتخابی مہم کے لیے عمران خان کو پیسہ بھارت اور اسرائیل سے آیا

جمعیت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کو 2018 میں انتخابی مہم کے لیے پیسہ بھارت اور اسرائیل سے آیا۔ 

کراچی میں ’اسرائیل نامنظور مارچ‘ سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ پاکستان سے وفادار ہیں تو اسرائیل کو کبھی تسلیم نہیں کریں گے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ فارن فنڈنگ کیس بتارہا ہے کہ عمران خان کو 2018 کے الیکشن کے لیے پیسہ بھارت اور اسرائیل سے آیا۔

سربراہ جے یو آئی (ف) نے کہا کہ میں کہتا ہوں تمہیں وزیراعظم کہنا جرم ہے۔

انھوں نے یہ بھی کہا کہ میں مولوی ہوں یا نہیں فیصلہ عالم کو کرنا ہے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے اعلان کیا کہ 5 فروری کو راولپنڈی میں کشمریوں سے اظہارِ یکجتہی کیا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ راولپنڈی میں بھی مرکزی جلسہ ہوگا جس میں پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی قیادت بھی آئے گی۔

جمعیت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کو 2018 میں انتخابی مہم کے لیے پیسہ بھارت اور اسرائیل سے آیا۔  کراچی میں ’اسرائیل نامنظور مارچ‘ سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ پاکستان سے وفادار ہیں تو اسرائیل کو کبھی تسلیم نہیں کریں گے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ فارن فنڈنگ کیس بتارہا ہے کہ عمران خان کو 2018 کے الیکشن کے لیے پیسہ بھارت اور اسرائیل سے آیا۔

سربراہ جے یو آئی (ف) نے کہا کہ میں کہتا ہوں تمہیں وزیراعظم کہنا جرم ہے۔ انھوں نے یہ بھی کہا کہ میں مولوی ہوں یا نہیں فیصلہ عالم کو کرنا ہے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے اعلان کیا کہ 5 فروری کو راولپنڈی میں کشمریوں سے اظہارِ یکجتہی کیا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ راولپنڈی میں بھی مرکزی جلسہ ہوگا جس میں پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کی قیادت بھی آئے گی۔

spot_imgspot_img