دو مجبور اور بے بس سربراہ