گوہرِ نایاب مِلتے ہیں مٹی کے گھروندوں میں