ڈاکٹر محمد مشتاق احمد

مارچ 11, 2021

عورت مارچ، توہینِ رسالت،نعرے اور قانون

ہر سال کی طرح اس بار بھی عورت مارچ میں اٹھائے گئے پلے کارڈز میں اکثر بے ہودہ نعرے بازی تھی؛ سوقیانہ جملے، منٹو کی بھونڈی […]
دسمبر 9, 2020

سودی قوانین کے خلاف مقدمہ اور علماے کرام کی ذمہ داری

وفاقی شرعی عدالت نے ایک دفعہ پھر سودی قوانین کے خلاف مقدمے کی سماعت شروع کی ہے۔ یہ مقدمہ جون 2002ء میں سپریم کورٹ نے واپس […]
اگست 22, 2020

سیدنا عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے حسن تدبیر،عدل اور احسان کی دومثالیں

جب رومی سلطنت کے ساتھ بڑی جنگ ۔ یرموک ۔ کا موقع آیا تو مسلمانوں کو مجبوراً بعض ایسے علاقے خالی کرنا پڑے جن کو انہوں […]
اگست 12, 2020

امام رضا سے امام غزالی تک، سفر نامہ ایران

پچھلے سال نومبر میں ایران میں ایک کانفرنس میں شرکت کی دعوت ملی تو اس نیت سے وہ دعوت قبول کی کہ اللہ نے چاہا تو […]
جولائی 29, 2020

صحابۂ کرام کی شان میں گستاخی پر علامہ ابن عابدین شامی کی تحقیق

چند دن قبل علامہ شامی کے بے مثال رسالے "تنبیہ الوُلاۃ و الحکام” کے انگریزی ترجمے کی توفیق ملی۔ اس رسالے میں علامہ شامی نے رسول […]
مئی 1, 2020

قادیانی مسئلہ: چند اہم وضاحتیں

اس موضوع پر اپنی پہلی پوسٹ میں میں نے دس نکات ذکر کیے تھے جن میں صرف ایک نکتے پر، حضرت علامہ زاہد الراشدی صاحب مدظلہ نے تبصرہ کرنا مناسب سمجھا اور وہ ارتداد کے متعلق میری راے تھی۔ ان کو یہ تاثر ملا ہے کہ شاید میں ارتداد کی بحث نئے سرے چھیڑرہا ہوں، حالانکہ ایسا نہیں ہے۔ ارتداد، زندقہ، فتنہ وغیرہ کی باتیں دوسرے اہل علم کررہے ہیں اور مجھ سے کئی لوگوں نے اس کے متعلق استفسار کیا تو مجھے وضاحت کرنی پڑی کہ میری ذاتی راے یہ ہے لیکن دستوری اور قانونی پوزیشن اس سے مختلف ہے۔ میری اس موجودہ پوسٹ سے شاید میری بات زیادہ واضح ہوگئی ہو کہ میں اس موجودہ دستوری پوزیشن کو چھیڑنے کے حق میں نہیں ہوں اور اسی لیے میں اس سوال پر بحث ہی نہیں کررہا کہ یہ دستوری پوزیشن کسی اجتہاد کے نتیجے میں مقرر کی گئی ہے، جیسا کہ حضرت علامہ راشدی صاحب بارہا علامہ اقبال کے مشورے کا حوالہ دیتے ہیںِ یا یہ محض وقتی طور پر ایک ممکنہ حل تھا جو 1974ء میں معروضی حالات میں ممکن تھا اور اسی وجہ سے قبول کیا گیا کہ یہ ہوجائے تو پھر بعد میں اس سے آگے جائیں گے، جیسا کہ کئی دیگر اہل علم کی راے ہے۔ میرا موقف یہ ہے کہ یہ اجتہاد ہو یا وقتی ممکنہ حل، اسے تبدیل کرنے کی کوشش کے مفاسد زیادہ ہوں گے اور اس لیے اس دستوری و قانونی پوزیشن پر اکتفا کرکے اس کی روشنی میں قادیانی فتنے، یا زندقہ، یا ارتداد سے نمٹنے کے سلسلے میں اپنی حکمتِ عملی پر غور کرنا چاہیے۔
اپریل 25, 2020

اطاعتِ اولی الامر کے متعلق چند بنیادی اصول

رویتِ ہلال کے مسئلے پر جناب پوپلزئی صاحب اور پشاور، چارسدہ، مردان، صوابی اور نوشہرہ کے مقامی علماے کرام سے ہمارا بنیادی اختلاف اس نکتے پر […]
مارچ 27, 2020

علمائے کرام اور سماجی تبدیلی

یہ سوال عموما سامنے آتا ہے کہ علماے کرام کیوں سماجی تبدیلی کو بہت مشکل سے قبول کرتے ہیں اور پھر آخر میں مان ہی جاتے […]
فروری 1, 2020

صحابۂ کرام کے متعلق ہمارا عقیدہ (عقیدۂ طحاویہ سے چند اقتباسات)

امام طحاوی نے اس متن کی ابتدا میں تصریح کی ہے کہ جس عقیدے کو وہ یہاں الفاظ کی شکل دے رہے ہیں، یہ اہل سنت […]
دسمبر 9, 2019

یروشلم اسرائیل کا دارالحکومت کیوں نہیں ہوسکتا؟

سوشلسٹ روس کے زوال کا بڑا نقصان یہ ہوا کہ ہمارے کئی دیسی سوشلسٹ مشرف بہ امریکا ہو کر "لبرل” کہلانے لگے۔ دیسی سوشلسٹ کم از […]